ایک بچہ ہفتے میں صرف3دن سکول آئے گا،نصاب اور امتحانات بارے بھی فیصلہ، طلبہ اور والدین کیلئے اہم اعلان کر دیا گیا

Spread the Story
  • 213
    Shares

ایک بچہ ہفتے میں صرف3دن سکول آئے گا،نصاب اور امتحانات بارے بھی فیصلہ، طلبہ اور والدین کیلئے اہم اعلان کر دیا گیا

کراچی (گلوبل کرنٹ نیوز) صوبائی وزیرتعلیم سندھ سعید غنی کا کہنا ہے کہ 9ویں تا12ویں جماعت میں پڑھائی جاری ہے، بقیہ تعلیمی ادارے بھی یکم فروری سے کھلیں گے،ایس او پی کے تحت 50 فیصد بچے آیا کریں گے، ایک بچے کو ہفتے میں 3 دن پڑھائی کیلئے تعلیمی ادارے آنا ہوگا۔

ایجوکیشن اسٹیرنگ کمیٹی اجلاس کے بعد میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے وزیرتعلیم سندھ سعید غنی نے بتایا کہ اجلاس میں تعلیمی صورتحال کا جائزہ لیا گیا ہے، اجلاس میں اتفاق ہوا کہ امتحانات جلد بازی میں نہیں لیے جائیں گے۔سعیدغنی کاکہنا تھا کہ امتحانات سے پہلے 60 فیصد نصاب کوبہتراندازمیں پڑھایا جائے،امتحانات میں تاخیر ہی کیوں نہ کرنی پڑے 60 فیصد سلیبسس پڑھانا ضروری ہے،اس سال کسی بھی صورت بغیر امتحانات طلبا کو پروموٹ نہیں کیا جائے گا۔

وزیر تعلیم نے بتایا کہ اسٹیرنگ کمیٹی کا اگلا اجلاس 30 جنوری کو ہوگا،جامع تعلیمی پلان برائے 21-2020اور22-2021 کی تیاری کیلئے کمیٹی بنائی ہے،کمیٹی تعلیمی اداروں میں پڑھائی کی مدت، امتحانات کاشیڈول اور نتائج کی تاریخ پر سفارشات تیار کرے گی۔سعیدغنی نے کہا کہ کمیٹی رواں تعلیمی سال اور اگلی تعلیمی سال کا شیڈول ایک ہفتے میں دے گی،کمیٹی میں سیکریٹری اسکولز، کالجز، یونیورسٹیز کے نمائندے اور تعلیمی بورڈ کے چیئرمین شامل ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ سندھ بھر کے نجی تعلیمی اداروں کا سینسس ہوگا، تعلیمی اداروں میں کورونا ٹیسٹ کا سلسلہ بھی جاری رہے گا۔وزیر تعلیم سندھ سعید غنی کا کہنا ہے کہ سندھ بھر میں پہلی سے آٹھویں اور جامعات یکم فروری سے کھل جائیں گی لیکن تمام سرکاری اور نجی تعلیمی ادارے اس بات کے پابند ہوں گے کہ وہ بچوں کو 50 فیصد ایک دن اور 50 فیصد دوسرے روز کلاسز کے لئے بلائیں۔

امتحانات کے بغیر اس سال کسی کو اگلی کلاسز میں نہیں بھیجا جائے گا اور 60 فیصد کورس مکمل ہونے کے بعد امتحانات لئے جائیں گے۔ محکمہ تعلیم کی اسٹیرنگ کمیٹی کی بنائی گئی کمیٹی آئندہ ایک ہفتہ میں موجودہ اور آئندہ تعلیمی سال، امتحانات کے شیڈول، تعطیلات اور داخلوں کے حوالے سے اپنی رپورٹ مرتب کرکے پیش کرے گی، جس کے بعد 30 جنوری کو دوبارہ اسٹیرنگ کمیٹی کا اجلاس طلب کیا گیا ہے، جس میں اس حوالے سے حتمی فیصلہ کیا جائے گا۔

تمام نجی تعلیمی اداروں کا سینسیس کیا جائے گا تاکہ ان کی تعداد اور ان میں تعلیم حاصل کرنے والے طلبہ و طالبات کی تعداد کا معلوم ہوسکے اور ہمیں صوبے میں لٹریسی کا حقیقی ریٹ معلوم ہو۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعہ کے روز سندھ اسمبلی کے کمیٹی روم میں منعقدہ محکمہ تعلیم کی اسٹیرنگ کمیٹی کے اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کیا۔

اجلاس میں سیکرٹری تعلیم اسکول و کالجز، تمام بورڈز و جامعات کے چیئرمینز، ماہرین تعلیم، نجی اسکولز کی ایسوسی ایشنز کے عہدیداران اور دیگر شریک ہوئے۔ سعید غنی نے کہا کہ نویں تا بارہویں جماعت تک کی کلاسز کا تدریسی عمل شروع ہوچکا ہے اور یکم فروری سے پرائمری سے آٹھویں اور جامعات کی تدریس کا عمل شروع کردیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.