چین کی زمین کی انتہائی گہرائی میں سائنسی تحقیق کے لیے لیب قائم

Spread the Story
  • 213
    Shares

چین نے زمین کی انتہائی گہرائی میں سائنسی تحقیق کے لیے بھی ایک لیب قائم کر لی ہے۔

چین نے زمین کی انتہائی گہرائی میں سائنسی تحقیق اور معدنی وسائل کی نشان دہی کرنے والی ٹیکنالوجی کو فروغ دینے کے لیے ایک نئی لیب کا افتتاح کیا ہے۔

وزارت قدرتی وسائل کا کہنا ہے یہ لیب چین کی اکیڈمی برائے ارضیاتی سائنسز کے تعاون سے تیار کیا گیا ہے، جس کا مقصد بین الاقوامی اثر و رسوخ کا حامل ایک تحقیقی ادارہ بننا ہے۔

یہ لیب جن شعبوں میں کام کرے گی ان میں زمین کی گہرائیوں میں وسائل اور ساختیاتی دریافت اور زمین میں گہرے ترین سوراخ کھودنا شامل ہیں۔ اس سلسلے میں یہ لیب تحقیقی وسائل کو جمع کرے گی اور اپنے بین الاقوامی ہم منصب اداروں کے ساتھ ان شعبوں میں تعاون کرے گی۔

زمین کی گہرائیوں سے حاصل ہونے والے ڈیٹا، اور دریافتوں کے لیے درکار آلات کے تبادلے کے حوالے سے بھی یہ لیب اپنی خدمات انجام دے گی۔

وزارت قدرتی وسائل کے مطابق زمین کی گہرائی میں بہت ساری توانائی، صنعتی خام مال اور آبی وسائل محفوظ ہیں، تاہم زمین کی انتہائی گہرائی میں وسائل کی دریافت میں کئی ایک مشکلات کا سامنا بھی ہوگا جن میں زمین کے اندر کا انتہائی دباؤ اور شدید درجہ حرارت والا ماحول شامل ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.