آئسولیشن کے ڈر سے مریض کیا سنگین اقدام اٹھا رہے ہیں؟

Spread the Story

لاہور ( جی سی این رپورٹ) پنجاب حکومت کی کورونا کے مریضوں کو اسپتال میں رکھنے کی پالیسی کارگر ثابت نہیں ہورہی اور اسپتال میں رکھے جانے کے خوف سے مشتبہ مریضوں نے ٹیسٹ کرانے ہی چھوڑ دیے۔ مشتبہ مریضوں کو اسپتال میں داخل کرنے کی پالیسی پر اہم اداروں نے تحفظات ظاہر کردیے اور صوبائی حکومت کو پالیسی پرنظرثانی کا مشورہ دے دیا۔شہریوں میں سماجی فاصلہ اختیار کرنے کی پالیسی کو فروغ دینے پر زور دیا جانا چاہیے پاکستان میں کورونا سے 8 ہلاکتیں، کیسز کی مجموعی تعداد 1100 سے بھی تجاوز کرگئی اہم اداروں کے مشورے پر پنجاب حکومت کی پالیسی کو تبدیل کیے جانے کا امکان ہےاور نئی پالیسی میں ٹیسٹ مثبت ہونے پر بھی مریض کو اس وقت تک گھر میں رہنے کی اجازت دی جائے گی جب تک اس میں کورونا وائرس کی علامات سنگین صورت اختیار نہیں کرلیتیں۔ خیال رہے کہ پاکستان میں کورونا وائرس کے مجموعی کیسز کی تعداد 1118تک جا پہنچی ہے جب کہ 8 افراد وائرس سے جاں بحق ہوچکے ہیں۔ آج بروز جمعرات پاکستان میں کورونا کے اب تک 41 کیسز رپورٹ ہوئے ہیں جن میں سے پنجاب میں 12، بلوچستان میں 12، اسلام آباد میں 9اور سندھ میں 8 کیسز رپورٹ ہوئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.