خا نہ کعبہ دن رات کھلا رہتا ہے جبکہ مسجد نبوی کو رات کے وقت بند کر دیا جاتا ہے، اس کے پیچھے کون سی بڑی وجہ پوشیدہ ہے؟حیران کن معلومات

Spread the Story

مکہ معظمہ میں حرم کعبہ کے اندرپاکستان کے بڑے بڑے علماایک جگہ تشریف فرماتھے کہ اچانک ایک عربی سامنے آیااورکہاکہ اے علمائے پاکستان کیاآپ جانتے ہیں کہ خانہ کعبہ دن رات کیوں کھلارہتاہے جب کہ مسجدنبویؐ رات کے وقت بندرہتی ہے ایساکیوں ہے اورمجھے جواب صرف قرآن مجیدکے حوالےسے دیناہے ۔پاکستان کے ان علما میں حضرت مولانامفتی محمودمرحوم بھی تشریف فرماتھے۔حضرت مفتی محمودنے فوراًآیت الکرسی پڑھناشروع کردی اورفرمایاکہ اللہ کے سواکوئی معبودنہیں وہ زندہ ہے کائنات کوتھامنے والاہے نہ اسے اونگھ آتی ہے اورنہ ہی نینداس لیے اللہ کاگھردن رات کھلارہتاہے اورمسجدنبوی ؐ میں آنحضرت ؐ کاروضہ اطہرہے جس میں افضل البشرآرام فرماہیں ۔توچونکہ انسان نیندکے ساتھ لازم وملزوم ہے انسان کوآرام کی ضرورت ہوتی ہے اس لیے رات کے وقت مسجدنبوی ؐبندرہتی ہے جب اللہ رب العالمین آرام سے پاک اورمستثنیٰ ہیں اس لیے خانہ کعبہ جواللہ پاک کی تجلیات کامرکز ہے وہ دن رات کھلارہتاہے ۔ دوسری جانب ایک یہ بھی روایت ہے کہ انسانوں کی طرح اسی دنیا میں شیطان اور جنات بھی پائے جاتے ہیں اور اگر کوئی اس مخلوق سے دور رہنا چاہے تو اس کیلئے حضورپاک ﷺ نے ایک ایسے نسخے کی تصدیق کردی جس پر تمام مسلمانوں کو عمل کرناچاہیے شیطان سے بچنے کیلئے:سیدنا ابوہریرہؓ سے روایت ہے کہ نبی پاک ﷺ نے فرمایا کہ سورہ قبرہ میں ایک آیت سیدہ آیت القرآن ہے وہ جس گھر میں پڑھی جائے، شیطان اس سے نکل جاتا ہے۔(مستدرک حاکم، ج1، ص560)ایک صحابیؓ کے گھر چوری:سیدنا ابی بن کعبؓ فرماتے ہیں کہ میرے پاس کھجوروں کی ایک بوری تھی۔.میں نے محسوس کیا کہ اس میں سے روز بروز کھجوریں کم ہوتی جارہی ہیں۔ ایک رات نگرانی کرکے ایک جانور کے مثل جوان لڑکے کو مین نے پکڑلیا۔ میں نے پوچھا تو انسان ہے یا جن؟ اس نے کہا : میں جن ہوں۔ اس کا ہاتھ کتے جیسا تھا اور ویسے ہی بال تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.